قبر سے خواتین کی لاشیں نکال کران کی شادی کرنے کی خوفناک سزا یا رسم:چین

قبر سے خواتین کی لاشیں نکال کران کی شادی کرنے کی خوفناک سزا یا رسم:چین

قبر سے خواتین کی لاشیں نکال کران کی شادی کرنے کی خوفناک سزا یا رسم:چین

قبر سے خواتین کی لاشیں نکال کران کی شادی کرنے کی خوفناک سزا یا رسم:چین

بیجنگ(نیوز ڈیسک) چین میں قبروں سے خواتین اورلڑکیوں کی لاشیں نکال کر ان کی مردہ آدمی سے شادی کرنے کے بعد دوبارہ دفن کرنے کے واقعات میں اضافہ ہوا ہے۔

چین کے کچھ لوگوں کا خیال ہے کہ اگر کوئی کنوارہ شخص اس دنیا سے رخصت ہوجاتا ہے اللہ کو پیارا ہو جاتا ہے۔ تو اگلی دنیا میں اسے غیر شادی شدا ہونے کی وجہ سے مسائل کا سامنا ہوتا ہے۔ اسی لیے مرنے والے تنہا افراد کی کسی خاتون یا لڑکی کی لاش سے شادی کرانے کے بعد اسے مرد کے ساتھ یا اس کے برابر قبر میں دفنادیا جاتا ہے۔
اگر کوئی شخص بغیر شادی کے مرجائے تو اس کی روح بھٹک کر اس کے عزیزوں کو اذیت پہنچاتی رہتی ہیں،قدیم چینی تہذیب میں یہ بات عام ہے۔ اسی لیے کئی خاندان اپنے مرنے والوں کے لیے ’بھوت دلہن‘ تلاش کرتے ہیں اور اسے اپنے عزیز کے ساتھ دفن کرتے ہیں ایسا کرنے سے ان کے عقائد کے مطابق تمام بلائیں ٹل جاتی ہیں اور خاندان محفوظ رہتا ہے اور کوئی روح یا بھوت خاندان سے دور رہتا ہے۔
اپنے ان عقائد کے مطابق چین کے مختلف علاقوں میں کنوارے شخص کی موت کے بعد کسی خاتون کا چاندی کا مجسمہ ،پلاسٹ کا پتلا اور دیگر اشیا ضرورت بھی ساتھ ہی دفنائی جاتی رہی ہیں۔ تاہم ان میں سب سے مؤثر آسان اور سستا طریقہ یہ ہے کہ کسی تازہ قبر کو کھود کر خاتون کی لاش نکالی جاتی ہے پھر اسے میک اپ کرکے نئے کپڑے پہنا دلہن بنا کر مرنے والے کی قبر کے ساتھ دفنادیا جاتا ہے جب کہ یہ لاشیں قبر سے نکالنے کے لیے خطرات کا سامنا بھی کیا جاتا ہے۔
چین میں کئی خفیہ گروہ مردہ خواتین کو چرانے والے کام کررہے ہیں۔ جو لاشوں کی بڑھتی ہوئی طلب کو پورا نہیں کرسکتے۔ ایک لاش پاکستانی 10 سے 15 لاکھ روپے ہے۔ 2011 میں ایسے گروہ کے 4 افراد کو پکڑا گیا تھا جنہوں نے قبر سے 10 خواتین کی لاشیں نکال کر فروخت کی تھیں۔